اسٹیٹ بینک کا زری پالیسی کا اعلان، شرح سود 7 فیصد پر برقرار

کراچی: اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے زری پالیسی کا اعلان کردیا۔ شرح سود میں کوئی کمی بیشی نہیں کی گئی، شرح سود 7 فیصد پر برقرار رکھنے کا فیصلہ کیا گیا، مانیٹری پالیسی کا اعلان آئندہ دو ماہ کیلئے کیا گیا ہے۔

اسٹیٹ بینک کے مطابق برآمدات اور معاشی اعدادوشمار میں بہتری آئی ہے، رواں مالی سال مہنگائی کی شرح 7 سے 9 فیصد رہنے کی توقع ہے۔ حالیہ اعدادوشمار معاشی بحالی کی مزید مضبوطی کو ظاہر کرتے ہیں۔ معاشی بحالی تعمیرات اور مینوفیکچرنگ کے شعبوں کی بدولت ممکن ہوئی۔

اعدادوشمار کے مطابق سیمنٹ کی فروخت تاریخ کی بلند ترین سطح پر ہے، بڑی صنعتوں میں بحالی کا عمل جاری ہے، مالی سال 21 کی پہلی سہ ماہی میں ایل ایس ایم سیکٹر نے 4.8 فیصد ترقی کی۔ مینوفیکچرنگ کے 15 میں سے 9 شعبے پیداوار میں اضافے کے عکاس ہیں۔ بیرونی شعبہ مسلسل بہتری کی راہ پر گامزن ہے۔

اسٹیٹ بینک کے مطابق رواں مالی سال پہلی سہ ماہی کے دوران جاری کھاتہ فاضل رہا، اکتوبر تک جاری کھاتہ ایک ارب 20 کروڑ ڈالر فاضل رہا۔ اکتوبر میں برآمدات تقریباً 2 ارب ڈالر تک پہنچ گئیں، جولائی تا اکتوبر کے دوران ترسیلات ِزر میں 26.5 فیصد اضافہ ہوا، اسٹیٹ بینک کے زرِمبادلہ کے ذخائر بڑھ کر12.9 ارب ڈالر تک پہنچ گئے، زرمبادلہ کے ذخائر فروری 2018 کے بعد بلند ترین سطح پر ہیں۔​