افراتفری ،آفات ،مصائب کے پہاڑ ٹوٹنے کا سبب صرف دین محمدی سے دوری کا نتیجہ ہے، علمائے کرام کا تبلیغی اجتماع سے خطاب میں پیغام


لاہور (آن لائن) رائے ونڈ عالمی تبلیغی اجتما ع کی مختلف نشستوں سے خطاب کرتے ہوئے مولانا فاروق آف بنگلہ دیش،مولانا عمر احمد ،قاری زبیر آف بنگلہ دیش اوردیگرعلماء کرام نے کہا کہ آج جو افراتفری پھیلی ہوئی ہے ،آفات ،مصائب کے جو پہاڑ ٹوٹ رہے ہیں اس کا سبب صرف اور صرف دین محمدی سے دوری ہے ،انسان اپنی کامیابی مال میں سمجھ رہا ہے مال کمانے کیلئے کسیچیز کو خاطر میں لانے کو تیار نہیں ہے حرام ،حلال کی تمیز کئے بغیر مال بنا رہا ہے قرآن حکیم میں اللہ رب العزت نے زمانے کی قسم اٹھا کر

کہا ہے کہ انسان گھاٹے میں ہے صرف وہی انسان فلاح و نجات کا حقدار ہوگا جو اللہ کی خوشنودی اور آقائے کائنات کے اسوہ حسنہ پر عمل پیرا ہو گا ،دنیا کی کامیابی کو مال میں سمجھنے والے بے وقوف ہیں اصل کامیابی اعمال میں ہے ،نیک ،صالح اعمال کی بدولت اللہ کو راضی کیا جاسکتا ہے دین کے کام کو کرین والے اللہ کے پسندیدہ بندے ہوتے ہیں رات کی تاریکیوں میں اٹھ کر رب کو منانا اور دن کی روشنی میں اس کی مخلوق کی خدمت کرنے سے کامیابی کے راستے کھلیں گے ،آج وقت گزر رہا ہے اس نے گزرنا ہی ہے کیوں نہ اس وقت کو قیمتی بنالیا جائے ،وقت کو قیمتی بنانے کیلئے نیک صالح اعمال کرنا ہوں گے ،اپنے دلوں میں رب کا خوف اور مخلوق کی خدمت کا جذبہ پیدا کرنا ہوگا تو کامیابی قدم چومے گے ۔ علماء کرام نے کہا کہ دنیا آخرت کی کھیتی ہے یہاں جو کچھ بوئیں گے وہی آگے جاکر کاٹیں گے ،اپنی اولاد ،مال کو دین کیلئے وقف کریں ،اپنے گھروں میں اسلام نافذ کریں ،اپنے دلوں کو قرآن حکیم کی تلاوت سے روشن کریں تودنیا کی تکلیفوں اور مصیبتوں سے نجات مل جائے گی ،دنیا میں آنے کی ترتیب ہے جانے کی ترتیب نہیں ہے جوان اولاد کو بوڑھے والدین کندھا دیتے نظر آتے ہیں ،وقت کو قیمتی جانیں ،مساجد کو آباد کریں ، نیک اعمال کریں ،مسلمان کیقدر کریں ،اپنے اعلیٰ اخلاق کے ذریعے دین کو اپنائیں ،اچھے اخلاق والا روز محشر نبی مکرم کے ساتھ ہوگا ،اپنے اخلاق ،معاملات اور اعمال کی بہتری کیلئے دین کے ماحول کو اپنائیں ،مساجد میں وقت دیں ،اولادوں کو دین سکھائیں ،نماز کی پابندی کو معمول بنالیں ،اپنے ناراض رب کو منانے کیلئے رات کی تنہائیوں میں اٹھیں تہجد کا اہتمام کریں دنیا وآخرت کی کامیابیاں مقدر ہوں گی۔