امریکی فوجی افسران کی جانب سے خواتین اور جونیئر اہلکاروں کو ہراساں اور تشدد کا نشانہ بنائے جانے کا انکشاف


نیویارکامریکا کے فوجی بیس پر خواتین اور جونیئر اہلکاروں پر تشدد اور ہراساں کئے جانے کے واقعات میں ملوث 14 امریکی فوجی افسران کو ملازمت سے فارغ کردیا گیا ہے۔

سمانیوز کے مطابق امریکی ریاست ٹیکساس کے فوجی بیس میں رواں سال خاتون اہلکار کی ہلاکت، جبکہ دیگر خواتین کو ہراساں کرنے اور تشدد کا نشانہ بنانے والے 14 فوجی افسران کو معطل کردیا گیا ہے۔ ان تمام برطرف افسران کے خلاف امریکی فوجی قوانین کے تحت آزادانہ تحقیقات کی گئی تھیں، جس کے بعد تمام الزامات کے ثبوت سامنے آگئے۔ آرمی سیکریٹری ریان میکارتھی نے بھی اس بات کی تصدیق کی تھی کہ غیر جانبدار سویلین ریویو بورڈ نے ٹیکساس کی فورٹ ہوڈ بیس میں بڑی تعداد میں موصول شکایات پر ایکشن تفتیش کی۔ریویو بورڈ نے انکشاف کیا ہے کہ فوجی چھاؤنی میں جرائم کی تحقیقات، جنسی ہراسانی کی مؤثر روک تھام نہ ہونے سے جنسی استحصال کی حوصلہ افزائی ہوئی۔ جب کہ فورٹ ہوڈ میں ہلاکتوں، گمشدگیوں سمیت دیگر واقعات کا کسی دوسری فوجی چھاؤنی کے مقابلے میں زیادہ ہونا یہاں قیادت کی ناکامی کا ثبوت ہے۔