بہترین قومی کرکٹر سمیع اسلم نے ٹیم میں جگہ نہ ملنے پر پاکستان چھوڑ دیا

قومی ٹیسٹ کرکٹر سمیع اسلم نے نجی ٹی وی چینل سے گفتگو کے دوران بتایا کہ انہوں نے مایوس ہو کر امریکا میں رہنے کا فیصلہ کیا ہے، سمیع اسلم نے کہا دکھ تھا کہ پاکستان ٹیم میں موقع نہیں دیا جا رہا اور ڈومیسٹک میں اچھا پرفارم کرنے باوجود ان پر دوسرے کھلاڑیوں کو ترجیح دی جا رہی ہے۔ دورہ نیوزی لینڈ کے لیے نام نہ آنے پر پاکستان چھوڑنے کا حتمی فیصلہ کیا۔

سمیع اسلم نے حالیہ قائداعظم ٹرافی فرسٹ کلاس کے تین راؤنڈ بھی کھیلے، انہوں نے ٹی 20 کپ کے لیے بلوچستان سیکنڈ الیون میں سلیکشن پر دستبرداری اختیار کی۔

قومی کرکٹر نے بتایا کہ بوجھل دل کے ساتھ امریکا پہنچا ہوں، پاکستان چھوڑنام میرے لیے آسان نہیں تھا، کرکٹ میری روٹی روزی ہے لیکن پاکستان میں مستقبل نظر نہیں آ رہا، مجھے اپنا گھر بھی چلانا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ وہ ابھی امریکا میں ڈومیسٹک کرکٹ کھیلیں گے۔ سمیع نے کہا کہ 2 سال 10 ماہ بعد امریکا کی جانب سے کھیلنے کے اہل ہوں گے۔

سمیع اسلم نے 2014 کےانڈر 19 ورلڈکپ میں پاکستان ٹیم کی قیادت بھی کی جب کہ وہ 2012 کے انڈر 19 ورلڈکپ میں بابر اعظم کی قیادت میں کھیلے۔ انہوں نے کہا کہ مجھے امید ہے میں امریکا میں مستقبل بنانے میں کامیاب ہوں گا، وہ 13 ٹیسٹ اور 4 ون ڈے میچز میں پاکستان کی نمائندگی کر چکے ہیں، اپنے پہلے دورہ انگلینڈ اور پھر نیوزی لینڈ کے لیے 35 کھلاڑیوں میں منتخب نہ ہونے پر دلبرداشتہ ہوئے۔