تعلیمی اداروں کی بندش، لاک ڈاؤن پرپیرکو مشاورت ہوگی،فیصل سلطان

Pic18-054
LAHORE: Oct18- A health worker wearing personal protective equipment (PPE) gear takes a swab sample from a man to test for the COVID-19 coronavirus at Sasta Bazaar Shalamar area in provincial capital. ONLINE PHOTO by Sajid Rana

وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان کا کہنا ہے کہ پیر کو نیشنل کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر اجلاس کے بعد تعلیمی اداروں کی بندش اور لاک ڈاؤن سے متعلق مشاور کی جائے گی۔

پاکستان میں کرونا وائرس کی دوسری لہر روز بروز شدید ہوتی جارہی ہے، گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران 37 مریض انتقال کر گئے جبکہ 2 ہزار 300 سے زائد نئے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں، 23 ہزار 641 ایکٹو کیسز میں 1219 افراد کی حالت تشویشناک ہے۔

وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان کا کہنا ہے کہ پیر کو این سی او سی کا اجلاس ہوگا جس کے فوری بعد وزارت صحت اور تعلیم کے اعلیٰ حکام ایک مشاورت اجلاس میں شریک ہوں گے، جس میں تعلیمی اداروں کی بندش اور لاک ڈاؤن سے متعلق فیصلہ کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ہمارا ہیلتھ کیئر سسٹم پہلے سے زیادہ بہتر ہوگیا ہے، کووڈ ہیلتھ الاؤنس سے متعلق ڈاکٹروں کے تحفظات دور کریں گے، رسک الاؤنس کے حوالے سے ڈاکٹرز کے تحفظات جائز ہیں، کرونا وارڈ میں کام کرنے والے تمام ڈاکٹرز کو رسک الاؤنس دیا جائے گا۔

معاون خصوصی صحت نے واضح کیا کہ اگر غلطی سے کسی ایسے شخص کو الاؤنس چلا گیا جو اس کا اہل نہیں تھا تو وہ واپس لیا جائے گا۔

پاکستان میں کرونا وائرس سے اب تک 7 ہزار 96 افراد زندگی کی بازی ہار چکے ہیں جبکہ مجموعی کیسز کی تعداد 3 لاکھ 52 ہزار 296 تک پہنچ گئی ہے۔