حکومت نے شوگر سکینڈل کی تحقیقات کرنے والی ٹیم کے سربراہ محمدرضوان کو اہم ہدایات جاری کر دیں


اسلام آباد حکومت کی جانب سے ڈاکٹر رضوان کو ایف آئی اے کی چینی سکینڈل کی تحقیقاتی ٹیم کی سربراہی جاری رکھنے کا حکم دیا گیا ہے۔

نجی ٹی وی جیویوز نے ذرائع کے حوالے سے کہاہے کہ وفاقی حکومت نے ڈاکٹر رضوان کو پیغام دیا ہے کہ وہ اپنی ٹیم کے ساتھ چینی سکینڈل کی تحقیقات جاری رکھیں۔ذرائع کے مطابق ڈاکٹر رضوان کی ٹیم ایڈیشنل ڈی جی ایف آئی اے ابوبکر خدا بخش کو رپورٹ کرے گی۔

سربراہ ایف آئی اے ٹیم ڈاکٹر رضوان نے آج اجلاس طلب کیا تھا، جس میں جہانگیر ترین اور ان کے صاحبزادے علی ترین کی 3 مئی کو کیس کی سماعت کے سلسلے میں لائحہ عمل طے کیا گیا۔ذرائع نے بتایا کہ اجلاس میں چینی سکینڈل کی تحقیقات میں پیش رفت کا جائزہ لیا گیا۔

ایف آئی اے کی ٹیم نے جمعے کو سینٹر علی ظفر کو جہانگیر ترین کے خلاف کیس پر بریفنگ دی تھی۔ذرائع نے یہ بھی بتایا ہے کہ میٹنگ میں جہانگیر ترین، اور دیگر شوگر مل مالکان کے خلاف کارروائی جاری رکھنے پر اتفاق کیا گیا۔

یاد رہے کہ اس سے قبل یہ خبریں گردش کرتی رہیں کہ چینی سکینڈل کی تحقیقات کرنے والی ٹیم کے سربراہ کو ہٹا دیا گیاہے ، ٹو اسٹار شوگر مل کے خلاف کارروائی پر شوگر تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ کو ہٹایا گیا۔ذرائع نے بتایا ہے کہ ٹو اسٹار شوگر مل خسرو بختیار خاندان کی ملکیت ہے۔