سال میں پانچویں مرتبہ چاند خانہ کعبہ کے عین اوپر


ریاض (این این آئی )سعودی عرب کی فلکیاتی سوسائٹی نے بتایا ہے کہ آٹھ نومبر کوچاند خانہ کعبہ کے عین اوپر دکھائی دیا ،میڈیارپورٹس کے مطابق سعودی فلکیاتی سوسائٹی کے نگران انجینئر ماجد ابوزہرہ نے کہا تھا کہ 8 نومبر کی صبح سورج طلوع ہونے سے قبل چاند کعبہ شریف کے عین اوپر دکھائی دیا۔انہوں نے کہا کہ مقامی وقت کے مطابق طلوع آفتاب سے قبل 6 بجکر 7 منٹ اور5 سیکنڈ پرچاند عین کعبہ شریف کے اوپرعمودی شکل نظرآیا۔ماہر فلکیات ابوزہرہ نے یہ بھی کہا کہ رواں برس چاند کا کعبہ شریف کے عین اوپر آنے کا یہ پانچواں

اور آخری موقع تھا۔انہوں نے مزید کہا کہ جس وقت چاند کعبہ شریف کے عین اوپر عمودی شکل میں دکھائی دیا اس کی اونچائی 89.58.19 ڈگری جبکہ چاندنے سورج سے 54.8 فیصد روشنی منعکس کی جس کا زاویہ 95 ڈگری تھا،سعودی فلکیاتی سوسائٹی کے نگران نے اس دوران چاند کی سورج سے دوری 383621 کلومیٹر تھی۔خیال رہے کہ سال 2020 میں پہلی مرتبہ 6 مارچ کو چاند کعبہ کے عین اوپر آیا تھا، اس کے بعد 30 اپریل کو چاند خانہ کعبہ کے اوپر نظر آیا تھا۔اس سے قبل خانہ کعبہ کے عین اوپر چاند دکھائی دینے کا منظر 2018 میں بھی دیکھا گیا تھا اور اسی سال 12 رمضان کو سورج بھی کعبہ شریف کے اوپر دکھائی دیا تھا۔بعدازاں 14 ستمبر کو چاند کے خانہ کعبہ کے اوپر آنے کا منظر دیکھا گیا تھا۔ماہرین کے مطابق زمانہ قدیم میں اس فلکیاتی عمل سے لوگ خانہ کعبہ کی سمت کا تعین کرتے ہوئے قبلہ درست کیا کرتے تھے۔