سوالات کے براہ راست سیشن کے دوران شہری کے جہانگیر ترین سے متعلق سوال پر وزیراعظم عمران خان نے کیا جواب دیا ؟ بڑی خبر


اسلام آباد وزیراعظم عمران خان نے شہری کے جہانگیر ترین اور شوگر سکینڈل سے متعلق سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ جہانگیر ترین کہتا ہے کہ اس کے ساتھ ناانصافی ہوئی ہے ، میرے مخالفین جن سے میں نے 25سال جنگ لڑی ان سے بھی نا انصافی نہیں کی،، میری گورنمنٹ چلی جائے لیکن انہیں این آر او نہیں دونگا۔

وزیراعظم عمران خان سے سوالات کے لائیو سیشن کے دوران شہری نے سوال کیا کہ جب آپ حکومت میں آئے توآپ کا موقف تھا کہ این آر او نہیں دوں گا لیکن گزشتہ پانچ چھ ماہ سے شوگر مافیاز کے آگے بے بس نظر آئے ہیں ، جہانگیر ترین سے آپ نے ملاقات کی اور انہیں آپ نے این آر او بھی دیدیا ، لوگوں کا ماننا ہے کہ اگر آپ ملاقات نہ کرتے تو آپ کا بجٹ ہی پاس نہیں ہونا تھا ۔“

وزیراعظم نے سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ جہانگیر ترین کہتا ہے کہ اس کے ساتھ ناانصافی ہوئی ہے ، میرے مخالفین جن سے میں نے 25سال جنگ لڑی ان سے بھی نا انصافی نہیں کی، اپنی جماعت کے فرد کیساتھ کیسے کر سکتا ہوں،جنہوں نے چینی مہنگی کر کے عوام کو تکلیف پہنچائی، میری گورنمنٹ چلی جائے لیکن انہیں این آر او نہیں دونگا،تمام سیاستدانوں کی شوگر ملز ہیں ، ایک روپیہ چینی مہنگی بڑھتی ہے تو پانچ ارب روپے انک ی جیبوں میں جاتے ہیں ، ہمارے دور میں پچیس روپے مہنگی ہوئی ، ایک سو ارب روپے سے زیادہ پیسے ان کی جیبوں میں گئے۔

انہوں نے کہا کہ پانچ سالوں میں انہوں نے بائیس ارب روپے ٹیکس دیا جس میں 12 ارب روپے ریفنڈ کر دیئے گئے جبکہ 29ارب روپے سبسڈی دی گئی ۔ان کاکہناتھا کہ شریفوں ، زرداری کی شوگر ملیں ہیں ، گنا آنے کے بعد چینی تین ماہ میں بن جاتی ہے ، لیکن ریٹ سارا سال بڑھتا رہتاہے،یہ خود ہی فیصلہ کر لیتے ہیں کہ چینی کی قیمت کیا ہونی چاہئے ، پہلی بار حکومت نے فیصلہ کیا کہ چینی کی قیمت کیا ہونی چاہئے او رقیمت نیچے آئی ،وزیر خزانہ کو میں صرف دو وجہ سے لے کر آیا ہوں کہ ایک تو مہنگائی کو نیچے لائیں اور دوسرا گروتھ ریٹ بڑھائیں۔