لاہور میں لڑکی کو قتل اور ریپ کی دھمکیاں دینے والا ملزم ابشام اپنے والد سمیت گرفتار

0
62


تازہ ترین اطلاعات کے مطابق پولیس نے سوشل میڈیا پر لڑکی کو ہراساں اور جان سے مارنے کی دھمکیاں دینے والے ملزم ابشام اور اس کے والد عمران کو گرفتار کر لیا ہے، فیاض الحسن چوہان نے ملزم کی گرفتاری کے بعد اپنے بیان میں کہا آج سے تین دن پہلےسوشل میڈیا پر خبر وائرل ہوئی تھی، یہ ملزم ایک نوجوان بچی اور اس کے اہل خانہ کو دھمکیاں دیتا ہے۔


صوبائی وزیر نے کہا کہ آج اگر اس درندے کو نشان عبرت نہ بنایا تو کل یہ کسی اور کی زندگی برباد کرے گا۔

فیاض الحسن نے یہ بھی بتایا کہ اس لڑکی کے والد نے پہلے منع کیا پھر تفصیلی بات کے بعد راضی ہوئے، لڑکی کے والد نے بتایا کہ ایک سال سے زائد کا عرصہ گزر چکا ہے پہلے ایف آئی اے کو درخواست دی مگر ایف آئی اے نے کارروائی نہیں کی انہوں نے کہا کہ ایسے معاملات پر ہم سب لوگوں کو اپنا رویہ ٹھیک کرنا چاہیے۔
انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ پنجاب کی ہدایت تھی کہ 24 گھنٹے میں ملزمان گرفتار کریں، سی سی پی او نے 10گھنٹوں میں باپ بیٹے کو گرفتار کر لیا، ملزمان کو گرفتار کرنے پر اےایس پی رضا تنویر کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں۔


ملزم ابشام نے سوشل میڈیا پرلڑکی کو جان سے مارنے کی دھمکیاں دی تھیں ، لڑکی کو دھمکیاں دینے پر ملزم کے خلاف مقدمہ درج ہوا تھا تاہم ملزم کو گرفتار نہ کیا جا سکا تھا گزشتہ روز فیاض الحسن چوہان نے سی سی پی او لاہور کو ملزمان کوپکڑنے کی ہدایت دی تھی۔

یاد رہے کہ لاہور میں طالبہ نے ریپ اور قتل کی دھمکیاں دینے والے ابشام نامی لڑکے کو سوشل میڈیا پر بے نقاب کیا تھا ، متاثرہ لڑکی کا موقف تھا کہ ابشام 2016 سے تنگ کررہا ہے، مقدمہ درج ہونے کے باوجود پولیس نے کوئی کارروائی نہیں کی۔ اس بیچاری لڑکی نے سوشل میڈیا کا سہارا لے کر ملزم کی دھمکیوں کے سکرین شاٹس اور ویڈیو شیئر کیں، جس کے بعد سوشل میڈیا پرابشام کو حوالات میں بند کرو کا ہیش ٹیگ ٹاپ ٹرینڈ کرنے لگا۔

اس سے قبل 14 ستمبر کو بھی ہمارے پلیٹ فارم سے اس ابشام نامی درندے کی درندگی کے خلاف آواز اٹھائی گئی تھی، تاہم یہ امر باعث مسرت ہے کہ ملزم اب جیل میں ہے اور حکام کی جانب سے بھی اسے سزا دلانے کی یقین دہانی کرائی گئی ہے۔ ہمیں ایسے مواقعوں پر پولیس کا اعتماد بحال کرنے کے لیے ان کی کاوشوں کو بھی سراہنا چاہیے۔

LEAVE A REPLY