وزیراعظم عمران خان نے آزادکشمیر الیکشن کو اپنی جماعت کیلئے مشکل کیوں قراردیا؟


وزیراعظم عمران خان نے تحریک انصاف کے کور کمیٹی اجلاس کے دوران آزادکشمیر انتخابات پر بات کرتے ہوئے اس میں اپنی پارٹی کی جیت کو مشکل قرار دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق نجی خبر رساں ادارے کا دعویٰ ہے کہ وزیراعظم نے آزادکشمیر انتخابات کو تحریک انصاف کے لیے چیلنج قرار دیا ہے۔

کور کمیٹی اجلاس کے دوران پارٹی کے ایک رکن نے کہا کہ ضمنی انتخابات میں تحریک انصاف کی شکست سے غلط میسج گیا ہے جس سے ووٹر کا مورال ڈاؤن ہوا۔ اس رکن کے مطابق آزاد کشمیر حکومت انتخابات کے لیے سرکاری وسائل کا بھی بے دریغ استعمال کر رہی ہے۔


اجلاس میں شرکا نے بتایا کہ آزادکشمیر میں انتخابات کی صورتحال گھمبیر ہے کیونکہ نہ تو کوئی نگران سیٹ اپ ہے اور مزید یہ کہ ترقیاتی فنڈز کو الیکشن مہم کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے۔

یادرہے کہ آزادکشمیر اسمبلی ارکان کی تعداد 49 تھی جس میں سے 29 آزادکشمیر، 12 مہاجرین اور 5 خواتین کے ہے۔ اس کے علاوہ ایک نشست علماء ومشائخ، ایک ٹیکنوکریٹ اور ایک سمندرپارپاکستانیوں کیلئے مختص کی گئی ہے۔

اب حالیہ ترمیم کے نتیجے میں آزادکشمیر میں 4نئے حلقوں کا اضافہ کیا گیا ہے جس کے بعد اب آزاد کشمیر اسمبلی میں نشستوں کی تعداد 53 ہو گئی ہے۔

واضح رہے کہ آزاد کشمیر کا علاقہ 13ہزار300 مربع کلومیٹر پر محیط ہے جبکہ یہاں کی کل آبادی 47 لاکھ ہے۔ آزاد کشمیر10 اضلاع 19 تحصیلوں جبکہ 182 یوسیز پر مشتمل ہے۔