وہ کونسی چار خوبیاں اور خامیاں رؤف کلاسرا میں ہیں جو انہیں بناتی اور بگاڑتی