ٹک ٹاک سٹار ماروی چوہدری نے نوجوان کا مبینہ قتل کیسے کیا؟ سنئے والدہ کی زبانی

ٹک ٹاک سٹار ماروی چوہدری نے نوجوان کو گھر بلا کر قتل کردیا۔ والدین سراپا احتجاج


ویڈیو شیئرنگ ایپ ٹک ٹاک ایک اور نوجوان کی جان لے گئی، ٹک ٹاک سٹار ماروی چودھری نے محمد علی نامی نوجوان کو فون کرکے اپنے گھر بلایا اور اس کو قتل کر دیا جبکہ لواحقین کو اطلاع کئے بغیر ہسپتال منتقل کر کے پوسٹ مارٹم کروا دیا۔

مقتول محمد علی کے لواحقین نے ٹک ٹاک سٹار ماروی چوہدری کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس گلزار احمد، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اور وزیراعظم پاکستان عمران خان سے انصاف فراہم کرنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ جلد سے جلد ماروی چودھری کو گرفتار کیا جائے اور ہمیں ریاست مدینہ جیسا انصاف فراہم کیا جائے۔

مقتول کی والدہ کا خبر رساں ادارے کے نمائندے سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ہمیں ماروی نے آکر بتایا کہ آپ کے بیٹے کی موت واقع ہوگئی ہے، اس کے ساتھ گاڑی میں ایک اور لڑکی موجود تھی جو ہمارے سامنے نہیں آئی اور جب ہم ہسپتال پہنچے تو ہمیں ہمارا بیٹا نہیں ملا بلکہ ہمیں ہمارا بیٹا وہاں ملا جہاں پر پوسٹ مارٹم کیا جاتا ہے۔

مقتول کی والدہ کے مطابق میرا بیٹا گھر سے نیلے رنگ کی بلکل نئی ٹی شرٹ پہن کر نکلا تھا لیکن جب اس کو ہم نے پوسٹ مارٹم کے لیے پڑا دیکھا تو اس کو کالے رنگ کی ٹی شرٹ پہنی ہوئی تھی، میرا یہاں سوال یہ ہے کہ میرے بیٹے کی ٹی شرٹ کس نے چینج کروائی ہے پولیس نے یا ماروی نے؟

انہوں نے کہا کہ ماروی کا مجھے بعد میں فون آیا اور اس نے مجھے کہا کہ میں نے نشہ بہت زیادہ کیا ہوا تھا۔

وزیراعظم عمران خان سے درخواست کرتے ہوئے مقتول کی والدہ کا کہنا تھا کہ عمران خان سے پہلے کسی بھی سیاستدان نے پاکستان کو ریاست مدینہ بنانے کا دعویٰ نہیں کیا تھا، اگر آپ پاکستان کو ریاست مدینہ بنانا چاہتے ہیں تو چار دن پہلے سعودی عرب میں ایک شہزادے کو پھانسی دی گئی تھی ہمیں بھی اسی طرز کا انصاف چاہیے ۔