پنجاب بھر میں وائی فائی کی مفت سرکاری سہولت ختم، اس منصوبے پر سالانہ کتنا خرچ ہورہاتھا؟ تفصیلات منظرعام پر


لاہور پنجاب حکومت نے صوبے بھر میں بھاری سالانہ سبسڈی کے باعث پنجاب وائی فائی پراجیکٹ بند کر دیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق سال 2017 میں اس وقت کی حکومت نے لاہورو ملتان سمیت صوبے کے 200 مقامات پر مفت سہولت فراہم کرنے کیلئے پنجاب وائی فائی منصوبہ شروع کیا تھا، منصوبے کے لئے سالانہ 19 کروڑ 50 لاکھ روپے خرچ آرہا تھا، گزشتہ سال کے شروع میں بھی پی ٹی سی ایل کو واجبات کی عدم ادائیگی پر وائی فائی کی سہولت عارضی طور پر بند ہوئی تھی، لیکن پھر اس سروس کو بحال کردیا گیا تھا۔

حکومت پنجاب کی جانب سے اب ایک بار پھرعوامی مقامات پر وائی فائی کی مفت سہولت ختم کردی گئی ہے، سہولت ختم ہونے سے صوبے بھر کے تعلیمی اداروں کے ہزاروں طلبا، ریسرچ اسکالرز اور صحافی مفت وائی فائی کی سہولت سے محروم ہوگئے ہیں۔واضح رہے کہ پنجاب کے یونیورسٹی اورکالجز کے طلبا وطالبات مفت سہولت سے مستفید ہورہے تھے، لاہور پریس کلب میں صحافیوں کے لئے بھی وائی فائی کی مفت سہولت میسر تھی، جب کہ لاہورائیرپورٹ، میٹرو بس اسٹیشن ، لاہور ریلوے اسٹیشن سمیت دیگر پبلک مقامات پر مفت وائی فائی کی سہولت دستیاب تھی۔