کورونا کی دوسری لہر، وزیراعظم کا ملک میں جلسے ختم کرنے کا اعلان


وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ کورونا کی دوسری لہر کے باعث ملک بھر میں جلسے جلوس ختم کر دیے گئے ہیں، پی ٹی آئی کا سنیچر کو ہونے والا جلسہ بھی نہیں ہو گا۔
پیر کو اسلام آباد میں کورونا کی صورت حال کے حوالے سے اجلاس کے بعد عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ گلگت بلتستان انتخابی مہم کے بعد بھی کیسز بڑھے، دوسری لہر کے نتیجے میں کورونا کیسز میں چار گنا تک اضافہ ہوا۔
’اب تک چھ سات اموات ہو رہی تھیں اور اب 25 تک پہنچ گئی ہیں۔‘

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ’پچھلی بار احتیاطی تدابیر کے باعث ہم بچ گئے تھے۔ اب پھر وہ وقت آ گیا ہے، عوام احتیاط کریں۔‘
وزیراعظم نے خبردار کرتے ہوئے کہا کہ ’اگر احتیاط نہ کی گئی تو ہسپتال مریضوں سے بھر جائیں گے۔‘
ان کا کہنا تھا کہ کوئی ایسا قدم نہیں اٹھایا جائے گا جس سے معیشت کو نقصان پہنچے، فیکرٹریز بند نہیں کی جا رہیں، تاہم عوام کو ایس او پیز کی پابندی کرنی چاہیے۔
عمران خان نے سکولوں کے حوالے سے کہا ان کو فی الوقت بند نہیں کیا جا رہا، مزید ایک ہفتے تک جائرہ لیا جائے گا
’اگر کیسز بڑھے تو سردیوں کی چھٹیاں بڑھا دی جائیں گی اور گرمیوں کی کم کر دی جائیں گی۔‘
انہوں نے کہا کہ شادی ہالز میں تین سو سے زائد افراد کے اجتماع کی اجازت نہیں ہو گی۔
عمران خان نے سکولوں کے حوالے سے کہا ان کو فی الوقت بند نہیں کیا جا رہا، مزید ایک ہفتے تک جائرہ لیا جائے گا
’اگر کیسز بڑھے تو سردیوں کی چھٹیاں بڑھا دی جائیں گی اور گرمیوں کی کم کر دی جائیں گی۔‘

انہوں نے کہا کہ شادی ہالز میں تین سو سے زائد افراد کے اجتماع کی اجازت نہیں ہو گی۔
’عوام کوشش کریں کہ تقاریب ان ڈور کے بجائے اوپن ایئر مقامات پر کریں۔‘
ریسٹورنٹس کے بارے میں عمران خان نے کہا کہ ان کو بند تو نہیں کیا جا رہا تاہم عوام کوشش کریں کہ ان کے اندر زیادہ تعداد میں جمع نہ ہوں اور کھلے ہوٹلز کو استعمال کریں۔
وزیر اعظم نے عوام کو ہدایت کرتے ہوئے کہا کورونا سے بچاؤ کی سب سے بنیادی چیز ماسک ہے اس لیے سب باہر نکلتے وقت ماسک پہنیں۔
وزیراعظم نے یہ بھی کہا کہ ’چونکہ مرض رش کی وجہ سے پھیلتا ہے اس لیے رش نہ کیا جائے۔‘
’پاکستان دنیا کا واحد ملک تھا جس نے رمضان میں بھی مساجد بند نہیں کیں، علما اور عوام کے تعاون کے باعث وہاں سے مرض نہیں پھیلا۔‘
وزیراعظم نے ایک بار پھر عوام پر زور دیتے ہوئے کہا اب پھر سے وہی وقت ہے کہ پچھلی بار کی طرح سب احتیاطی تدابیر پر عمل کریں۔