وکٹوں کی تیز ترین ڈبل سنچری،یاسر شاہ82سالہ پرانا ریکارڈ توڑنے کے قریب

ابوظہبی (آئی این پی)82سال پرانا اہم ترین ٹیسٹ ریکارڈ بھی یاسر شاہ کی جھولی میں گرنے کو تیارہے۔نیوزی لینڈ سے دوسرے ٹیسٹ میں 14وکٹیں لے کر پاکستان کی اننگز سے کامیابی میں اہم کردار ادا کرنے والے یاسر شاہ سابق آسٹریلوی عظیم کرکٹر کلیری گریمٹ کے بارے میں زیادہ نہیں جانتے۔ مگر اسپنرکے پاس ان کا 82سالہ ریکارڈ توڑنے کا شاندار موقع بہرحال موجود ہے۔اس وقت32سالہ لیگ اسپنر کی وکٹوں کی تعداد 32ٹیسٹ میں 195ہے،انھیں طویل فارمیٹ میں وکٹوں کی تیز ترین ڈبل سنچری مکمل کرنے کیلئے پیر سے کیویز کے خلاف شروع ہونے والے تیسرے اور آخری میچ میں مزید

پانچ وکٹوں کی ضرورت ہوگی۔حقیقت تو یہ ہے کہ اگر وہ اگلے تین میچز میں کسی بھی موقع پر یہ پانچ شکار کریں تب بھی گریمٹ سے ریکارڈ چھین لیں گے جو انھوں نے 1936میں جنوبی افریقہ کیخلاف اپنے 36ویں میچ میں 200ویں وکٹ حاصل کرکے قائم کیا تھا۔یاسر شاہ نے کہاکہ میں گریمٹ کے بارے میں زیادہ نہیں جانتا مگر ان کا ریکارڈ بہرحال میری نظر میں ہے اور میں اسے توڑنا چاہتا ہوں۔ یاد رہے کہ یاسر شاہ نے ٹیسٹ وکٹوں کی سنچری 17 میچز میں مکمل کی تھی، اس طرح وہ اس مقام پر پہنچنے والے دوسرے تیز ترین بولر تھے،انگلینڈ کے گریگور لومین 1896 میں صرف 16 میچز میں اس سنگ میل پر پہنچ چکے ہیں۔یاسر کی والدہ نیوزی لینڈ کے خلاف سیریز سے چند روز قبل خالق حقیقی سے جاملی تھیں۔ اس بارے میں انھوں نے کہاکہ میرے لیے یہاں پر آنا ہی کافی مشکل تھا، آپ اپنی والدہ کے بغیر کچھ بھی نہیں ہیں، میری عادت رہی ہے کہ ہر میچ سے قبل اپنی والدہ کو فون کرکے کہتا تھا کہ دعا کریں میں پانچ وکٹیں لوں، جس پر وہ کہتیں کہ 5 ہی کیوں، 10 یا 15 وکٹیں کیوں نہیں؟ اس لیے میں یہ اعزاز اپنی والدہ کے نام کرتا ہوں۔