حکومت نے نئی اشتہاری پالیسی جاری کر دی، ن لیگ کے دور میں ایک منٹ کے سرکاری اشتہار کا ریٹ کس کو ملتا تھا؟ اور اب تحریک انصاف کے دور میں کس کو ملے گا؟ حیرت انگیز انکشاف

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) تحریک انصاف کی حکومت نے الیکٹرانک میڈیا کے لیے نئی اشتہاری پالیسی جاری کر دی ہے، ٹی وی چینلز کی ریٹنگ کو مدنظر رکھتے ہوئے نئی پالیسی بنائی گئی ہے اور اشتہارات کے ریٹس بھی کم کر دیے گئے ہیں، نئی اشتہاری پالیسی سے بڑے چینلز متاثر ہوں گے تو وہیں چھوٹے چینلز جو شاید کیبل پر بھی نہ آتے ہوں اور اشتہارات کے ریٹ لاکھوں میں وصول کر رہے تھے، ان کی آمدنی پر بھی اثر پڑے گا۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر سینئر صحافی باقر سجاد نے نئی اشتہاری پالیسی کی لسٹ شیئر کر دی ہے، اس لسٹ کے مطابق سابق حکومت میں سب سے مہنگا اشتہار جیو نیوز کو ملتا تھا، ایک منٹ کے اشتہار کے لیے جیو نیوز کو دو لاکھ 90 ہزار 500 روپے کی ادائیگی کی جاتی تھی مگر نئی پالیسی کے تحت جیو کو اب 89 ہزار فی منٹ پر ہی گزارا کرنا ہوگا، نئی اشتہاری پالیسی کے مطابق اب سب سے مہنگا اشتہار اے آر وائی نیوز کو ملے گا، اے آر وائی کو سرکاری اشتہار 91 ہزار روپے فی منٹ کے حساب سے دیا جائے گا، ن لیگ کی حکومت میں اے آر وائی کو دو لاکھ 45 ہزار روپے فی منٹ ملتے تھے، دنیا نیوز کو پہلے 2 لاکھ 73 ہزار روپے فی منٹ ملتے تھے لیکن اب فی منٹ 75 ہزار روپے ملیں گے، مسلم لیگ (ن) کی حکومت میں سماء ٹی وی اور ایکسپریس نیوز کو اشتہار کے ایک منٹ کے دو لاکھ 45 ہزار روپے دیے جاتے تھے لیکن اب سما ٹی وی کو ایک منٹ کے 85 ہزار اور ایکسپریس نیوز کو 65 ہزار ایک منٹ کے ملیں گے۔ اس لسٹ میں ایسے ٹی وی چینلز بھی ہیں جن کی ریٹنگ اتنی نہیں تھی لیکن انہیں اس سے زیادہ ریٹ پر اشتہار دیے گئے۔ تحریک انصاف کی حکومت نے الیکٹرانک میڈیا کے لیے نئی اشتہاری پالیسی جاری کر دی ہے، ٹی وی چینلز کی ریٹنگ کو مدنظر رکھتے ہوئے نئی پالیسی بنائی گئی ہے اور اشتہارات کے ریٹس بھی کم کر دیے گئے ہیں